اربوں سال پہلے

اربوں سال پہلے کی کہکشاؤں کے جھرمٹ کی تصاویر

image

یہ تصویر امریکی دارالحکومت واشنگٹن ڈی سی میں امریکی فلکیاتی سوسائٹی کے 223ویں اجلاس کے موقعے پر دکھائی گئی

خلائی دوربین ہبل نے اب تک دریافت ہونے والے بعید ترین واقع کہکشاؤں کے جھرمٹ کی تصاویر کھینچی ہیں۔ ’پینڈورا کلسٹر‘ نامی یہ جھرمٹ زمین سے 12 ارب نوری سال کے فاصلے پر واقع ہے۔

اس کا مطلب ہے کہ روشنی نے وہاں سے زمین تک پہنچنے میں 12 ارب سال لگائے ہیں۔ چونکہ یہ روشنی 12 ارب سال پہلے وہاں سے نکلی تھی اس لیے یہ تصویر دراصل 12 ارب سال پہلے کا منظر پیش کرتی ہے، جب کائنات کو وجود میں آئے زیادہ عرصہ نہیں گزرا تھا۔

یہ تصویر امریکی دارالحکومت واشنگٹن ڈی سی میں امریکی فلکیاتی سوسائٹی کے 223ویں اجلاس کے موقعے پر دکھائی گئی۔

تصویر کے پیش منظر میں رنگین کنڈل دار اور بیضوی کہکشائیں ہیں جنھیں ایبل 2744 کہا جاتا ہے۔

اس جھرمٹ کو پینڈورا اس لیے کہا جاتا ہے کہ اس جھرمٹ کی تخلیق بہت عجیب اور شدید رہی ہے، اور اس سے ماہرینِ فلکیات کو بہت کچھ سیکھنے کا موقع ملا ہے۔

ایبل کے عظیم کششِ ثقل ایک محدب عدسے کی مانند کام کرتے ہوئے اس کے پس منظر میں واقع اشیا کو بڑا کر کے دکھاتی ہے۔

ہبل کی تصویر میں تین ہزار کے قریب کہکشائیں دکھائی دے رہی ہیں، جو پیش منظر میں واقع دوسری سینکڑوں کہکشاؤں کے ساتھی گتھی ہوئی ہیں۔

یہ کہکشائیں عدسے کے عمل کی وجہ سے زیادہ روشن دکھائی دے رہی ہیں۔ اس کے علاوہ سرکس کے آئینے میں دکھائی دینے والی اشیا کی مانند یہ تصویر خاصی مسخ بھی ہو گئی ہے۔

اس بے مثال تصویر کو ناسا کی سپٹزر دوربین اور چندرا ایکس رے دوربین سے لی گئی تصاویر کے ساتھ ملایا جائے گا جس سے کہکشاؤں اور ان کے ساتھی بلیک ہولز کی تخلیق و تشکیل کے عمل کو سمجھنے میں مدد ملے گی۔

image

           ہبل دوربین

اگرچہ ہبل نے پہلے بھی اس فاصلے پر موجود کہکشاؤں کی تصاویر کھینچی ہیں، لیکن یہ تصویر اس قدر روشن ہے کہ اس سے ماہرینِ فلکیات حیران رہ گئے۔ یونیورسٹی آف کیلی فورنیا کے گیرتھ النگورتھ کہتے ہیں:

’یہ کہکشائیں بے حد نمایاں نظر آتی ہیں کیوں کہ یہ ہماری توقع سے کہیں زیادہ روشن ہیں۔ کائنات کی زندگی میں اس قدر ابتدائی دور میں

ان کا تشکیل پا جانا بہت غیر متوقع تھا۔‘

اگرچہ ان کہکشاؤں کا حجم ہماری کہکشاں کا صرف ایک فیصد ہے، لیکن ڈاکٹر النگورتھ کہتے ہیں: ’یہ ہماری توقعات سے کہیں بڑی ہیں، کیوں کہ یہ بالکل ابتدائی دور سے تعلق رکھتی ہیں۔‘

یہ تحریر بی بی سی اردو نیوز سے لی گئی ہے

Advertisements

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out / Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out / Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out / Change )

Google+ photo

You are commenting using your Google+ account. Log Out / Change )

Connecting to %s